Main Menu

ڈونلڈ ٹرمپ کا افغانستان کا اچانک دورہ، افغانی صدرسے ملاقات

امریکی صدر ڈونلڈ ٹرمپ نے گزشتہ روز افغانستان میں امریکا کے سب سے بڑے فضائی اڈے بگرام ایئر فیلڈ کا دورہ کیا اورامریکی فوجیوں سے ملاقات کی۔ دورے کے دوران امریکی صدر نے افغانستان کے صدر اشرف غنی کے ساتھ بھی ملاقات کی۔
اس موقع پر صدر ڈونلڈ ٹرمپ کا کہنا تھا کہ طالبان کےساتھ امن مذاکرات کا آغازکردیا ہے۔ طالبان کے ساتھ معاہدے کے لیے بات چیت کررہے ہیں۔ امریکی صدر نے کہا ہمارا کہنا ہے کہ جنگ بندی ضروری ہے اور وہ جنگ بندی نہیں چاہتے تھے لیکن اب وہ جنگ بندی چاہتے ہیں، مجھے یقین ہے یہ شاید اسی طرح کام کرے گا۔ صدر ٹرمپ نے کہا افغانستان میں امریکی فوجیوں کی تعداد 13 ہزار سے کم کرکے 8600 کرنے کا منصوبہ ہے۔
امریکی صدر کاطیارہ جمعرات کی شام کو جب بگرام ایئرفیلڈ پر اترا تو ان کے ہمراہ وائٹ ہاؤس کے نیشنل سیکیورٹی (قومی سلامتی) کے مشیر رابرٹ او برائن اور سیکریٹ سروس ایجنٹس کے اہلکاروں کا مختصر گروپ بھی تھا۔ واضح رہے کہ امریکا کے صدر بننے کے بعد ڈونلڈ ٹرمپ کا افغانستان کا یہ پہلا دورہ ہے۔
دورے کے دوران صدر ڈونلڈ ٹرمپ نے افغانستان کے صدر اشرف غنی سے ملاقات کی اور امریکی فوجیوں کو تھینکس گیونگ ڈنر سے قبل ٹرکی پیش کی۔ اس کے علاوہ انہوں نے وہاں تعنیات کچھ امریکی فوجیوں کے ساتھ بات چیت کی اور ان کے ساتھ تصاویر بھی کھینچیں۔






Leave a Reply